دوری جدول

18 گروپ پر مشتمل دوری جدول below)


دَوْرِیْ جدول (انگریزی: Periodic table) تمام عناصر کا ایک چارٹ ہے جس میں تمام کیمیائی عناصر کو ان کے ایٹمی نمبر (مرکزے میں پروٹون کی تعداد) کے لحاظ سے ترتیب سے دکھایا گیا ہے۔ اس جدول سے عناصر کی الیکٹرونک کنفگریشن اور کیمیائی خصوصیات یاد رکھنا بہت آسان ہو جاتا ہے کیونکہ ہر گروپ کے عناصر بڑی حد تک ملتی جُلتی کیمیائی خصوصیت رکھتے ہیں۔ اس ترتیب کو چار بڑے بلاک میں تقسیم کیا گیا ہے جو (s,p،d,f) پر مشتمل ہیں۔ عام طور سے ہر پیریڈ (period) کے دائیں جانب غیر دھاتیں اور بائیں جانب دھاتیں ہوتی ہیں۔

دوری جدول کی بائیں سے دائیں صفوں کو دور یا پیریڈ جبکہ اوپر سے نیچے آتے ستونوں (کالموں) کو گروپ کہتے ہیں۔ ان میں سے چھ گروپوں (کالموں) کے نمبر کے ساتھ نام بھی ہیں مثلا 17 ویں گروپ کو ہیلوجن اور 18 ویں گروپ کو نوبل گیسیں کہتے ہیں۔ دوری جدول کے ذریعہ ہم عناصر کی خصوصیات اور ان کے درمیان تعلق کو جان سکتے ہیں نیز اس کے ذریعہ ہم نئے دریافت ہونے والے عناصر یا مصنوئی طور پر بنائے جانے والے عناصر کی کیمیائی خصوصیات کا اندازہ کرسکتے ہیں۔ مختلف عناصر کے طبعی و کیمیائی رویوں کو معلوم کرنے کے لیے کیمیاء اور سانئس کے مختلف شعبوں میں دوری جدول کو استعمال کیا جاتا ہے۔

روسی کیماء دان دمیتری منڈلیف نے 1869ء میں ایک دوری جدول شائع کیا تھا جس نے بڑی مقبولیت حاصل کی۔ انھوں نے اس دوری جدول میں اس وقت تک کے دریافت شدہ عناصر کی درجہ بندی ان کے خصوصیات کے مطابق کی۔ منڈلیف نے اس وقت بعض غیر دریافت شدہ عناصر کی خصویات کے بارے میں بھی پیشن گوئی کی جو دوری جدول کی خالی جگہوں میں ممکنہ طور پر جگہ لینے والے تھے۔ جب بعد میں یہ عناصر دریافت کیے گئے توان کی پیشن گوئیوں میں سے اکثر درست ثابت ہوئیں۔ منڈلیف کے دوری جدول کے بعد سے اب تک یہ جدول کافی بڑھ گئی ہے جس کی وجہ بہت سے عناصر کی دریافت ،تخلیق اور کیمیائی خصوصیات کی تعریف کے لیے نئے نمونے کا سامنے آنا ہے۔ اگرچہ مینڈیلیف کے زمانے میں دوری جدول کو ایٹمی وزن کے لحاظ سے ترتیب دینے کی کوشش کی گئی تھی جس کی وجہ سے کچھ پیچیدگیاں سامنے آتی تھیں مگر بعد میں جب نیوٹرون اور پروٹون دریافت ہوئے تو دوری جدول کو ایٹمی وزن کی بجائے ایٹمی نمبر کے لحاظ سے ترتیب دیا گیا جس سے وہ پیچیدگیاں ختم ہو گئیں۔

پہلے 94 عناصر قدرتی طور پر دنیا میں پائے جاتے ہیں اگرچہ ان میں کچھ بہت کم مقدار میں ہی مل سکتے ہیں اور ان میں سے بعض دریافت سے بھی قبل لیباٹریز میں تخلیق کیے گئے تھے۔ وہ عناصر جو 95 سے 118 تک ہیں انہیں لیباٹریز میں تخلیق کیا گیا ہے لیکن یہ سب نہایت تیزی سے تابکاری کی وجہ سے فنا ہو جاتے ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ 95 سے 100 تک کے عناصر کبھی قدرتی طور پر بھی وجود رکھتے تھے لیکن اب نہیں پائے جاتے۔ بڑے اٹامک نمبر والے عناصر کو لیباٹریز میں تخلیق کرنا اب ممکن بات ہے۔

چھٹے پیریڈ میں گروپ 2 اور گروپ 3 کے درمیان لینتھینائڈ (Lan­thanide) گروپ کے 14 عناصر ہوتے ہیں(نمبر 57 سے 70 تک)۔ اسی طرح ساتویں پیریڈ میں گروپ2 اور گروپ 3 کے درمیان ایکٹینائڈ (Actinide) گروپ کے 14 عناصر ہوتے ہیں(نمبر 89 سے 102 تک)۔ چونکہ دوری جدول کی چوڑائی کسی کتاب کے صفحے کی چوڑائی سے عموماً زیادہ ہوتی ہے اس لیے دوری جدول کی چوڑائی کم کرنے کے لیے لینتھینائڈ اور ایکٹینائڈ کو دوری جدول میں سے کاٹ کر دوری جدول کے نیچے دکھایا جاتا ہے تاکہ یہ کتاب کے ایک صفحے میں سما سکے۔

دوری جدول میں بائیں سے دائیں: پہلے s بلاک(گلابی)، اس کے بعد f بلاک(ہرا)، اس کے بعد dبلاک (نیلا) اور آخرمیں p بلاک (پیلا) کے عناصر ہوتے ہیں۔(سوائے ہیلیئم کے)
یہاں بلاک سے مراد ہے کہ ایٹم میں داخل ہونے والا آخری الیکٹرون کس مدارچے کا حصہ بنا۔

مدار اور مدارچے

ایٹم کے مداروں ( orbits یا shell) کے نام K سے شروع ہوتے ہیں جیسے K, L, M, N, O, P وغیرہ۔
ہر مدار کے ذیلی مداروں کو مدارچے(orbitals) کہا جاتا ہے۔ یہ چار تک ہو سکتے ہیں۔ ان کے نام s, p, d اور f ہیں۔

  • s مدارچے میں زیادہ سے زیادہ دو الیکٹرون سما سکتے ہیں۔
  • p مدارچے میں زیادہ سے زیادہ 6 الیکٹرون سما سکتے ہیں۔
  • d مدارچے میں زیادہ سے زیادہ 10 الیکٹرون سما سکتے ہیں۔
  • f مدارچے میں زیادہ سے زیادہ 14 الیکٹرون سما سکتے ہیں۔
  • g مدارچہ ابھی ایجاد نہیں ہوا ہے۔ جب 121 پروٹونوں والا ایٹم ایجاد ہو گا تو الیکٹرون g مدارچہ میں پہلی دفعہ داخل ہو گا۔ اس مدارچے کی گنجائش 18 الیکٹرون ہو گی۔
پہلے 18 الیکٹرون ایٹم کے اندر سب سے اندرونی مداروں میں سما جاتے ہیں۔ لیکن اس کے بعد یہ ممکن ہو جاتا ہے کہ ایٹم کے اندرونی مدار میں جگہ خالی ہو پھر بھی الیکٹرون بیرونی کسی مدار میں چلا جائے۔

اگر درجہ حرارت مناسب ہو تو

  • پہلے دور (پیریڈ) کے سارے ایٹموں میں صرف ایک مدار ہوتا ہے جسے K shell کہتے ہیں۔ اس میں صرف ایک ہی مدارچہ (ذیلی مدار) ہوتا ہے جس کا نام 1sہوتا ہے اور اس میں زیادہ سے زیادہ دو الیکٹرون سما سکتے ہیں۔ اسی وجہ سے پہلے پیریڈ میں صرف دو عنصر ہوتے ہیں یعنی ہائیڈروجن اور ہیلیئم۔
  • دوسرے پیریڈ کے سارے ایٹموں میں دو مدار (orbits) ہوتے ہیں جو KاورLشیل ہیں۔ پہلے شیل K میں صرف ایک مدارچہ 1s ہوتا ہے جبکہ دوسرے شیل L میں دو مدارچے 2s اور 2p ہوتے ہیں۔ اسی وجہ سے دوری جدول کے دوسرے پیریڈ میں کل 8 ایٹم ہوتے ہیں۔
  • تیسرے پیریڈ کے سارے ایٹموں میں تین مدار (orbits) ہوتے ہیں جو K, L اورMشیل ہیں۔ پہلے شیل K میں صرف ایک مدارچہ 1s ہوتا ہے جبکہ دوسرے شیل L میں دو مدارچے 2s اور 2p ہوتے ہیں اور تیسرے شیل M میں 3 مدارچے 3s, 3p اور 3d ہوتے ہیں جن میں 3d بالکل خالی ہوتا ہے۔ فزکس کے اصول بتاتے ہیں کہ 3d میں الیکٹرون اس وقت تک داخل نہیں ہو سکتا جب تک کہ باہر 4s میں دو الیکٹرون نہ بھر چکے ہوں۔ اسی وجہ سے دوری جدول کے تیسرے پیریڈ میں بھی کل 8 ہی ایٹم ہوتے ہیں۔
  • چوتھے پیریڈ کے سارے ایٹموں میں چار مدار (orbits) ہوتے ہیں جو K, L, M اورNشیل ہیں۔ پہلے شیل K میں صرف ایک مدارچہ 1s ہوتا ہے جبکہ دوسرے شیل L میں دو مدارچے 2s اور 2p ہوتے ہیں اور تیسرے شیل M میں 3 مدارچے 3s, 3p اور 3d ہوتے ہیں جن میں 3d میں الیکٹرون کا بھرنا اب ممکن ہو جاتا ہے کیونکہ باہر 4s میں دو الیکٹرون آ چکے ہوتے ہیں (پوٹاشیئم اور کیلشیئم کے بعد)۔ یعنی ایٹم میں داخل ہونے والا اکیسواں الیکٹرون 3dکے مدار میں داخل ہو سکتا ہے۔ لیکن 4d اور 4fبالکل خالی ہوتے ہیں اسی وجہ سے دوری جدول کے چوتھے پیریڈ میں کل 18 ایٹم ہوتے ہیں۔
  • پانچویں پیریڈ کے سارے ایٹموں میں پانچ مدار (orbits) ہوتے ہیں جو K, L, M, N اورOشیل ہیں۔ پانچویں شیل میں پانچ مدارچے ہونے چاہیں لیکن اب تک اتنا بھاری ایٹم دریافت نہیں ہوا ہے جس میں پانچواں مدارچہ بھرنا شروع ہو جائے۔ اس وجہ سے پانچویں شیل میں بھی صرف چار یعنی 5s, 5p, 5d اور 5f مدارچے ہی ہوتے ہیں لیکن 4f اور5d اور 5f اب بھی بالکل خالی ہوتے ہیں۔ اسی وجہ سے دوری جدول کے چوتھے پیریڈ میں بھی کل 18 ہی ایٹم ہوتے ہیں۔
  • چھٹے پیریڈ کے پہلے دو ایٹموں (سیزیئم اور بیریئم) میں چھٹے شیل کا مدارچہ 6s الیکٹرونوں سے بھرتا ہے۔ اس کے بعد کے عناصر میں الیکٹرون اب پہلی دفعہ 4f کے مدارچے بھرنا شروع کرتے ہیں اور اگلے 14 ایٹموں میں یہی مدارچہ بھرتا رہتا ہے۔ جن ایٹموں میں داخل ہونے والا آخری الیکٹرون 4f مدارچے میں داخل ہوتا ہے انہیں Lanthenids کہتے ہیں۔ اسی طرح جن ایٹموں میں 5f مدارچے میں آخری الیکٹرون داخل ہوتے ہیں وہ Actinids کہلاتے ہیں۔ چھٹے اور ساتویں پیریڈ میں 32 بتیس ایٹم ہوتے ہیں۔
    • اگر کسی بہت بھاری ایٹمی مرکزے میں یکے بعد دیگرے الیکٹرون داخل ہوتے چلے جائیں تو شیل کچھ اس ترتیب سے بھرتے جائیں گے ۔(بائیں سے دائیں)

1s, 2s, 2p, 3s, 3p, 4s, 3d, 4p, 5s, 4d, 5p, 6s, 4f, 5d, 6p, 7s, 5f, 6d, 7p, (8s, 5g, 6f, 7d, 8p, and 9s)
ساتویں شیل کا p مدارچہ (7p) جب بھر چکا ہوتا ہے تو ایٹم میں کل الیکٹرونوں کی تعداد 118 ہو چکی ہوتی ہے۔ اب تک اس سے بڑا ایٹم دریافت نہیں ہوا ہے۔

Other Languages
العربية: جدول دوري
Afrikaans: Periodieke tabel
Alemannisch: Periodensystem
asturianu: Tabla periódica
Bân-lâm-gú: Chiu-kî-piáu
беларуская (тарашкевіца)‎: Пэрыядычная сыстэма хімічных элемэнтаў
Boarisch: Periodnsystem
Cymraeg: Tabl cyfnodol
ދިވެހިބަސް: ޕީރިއަޑިކް ތާވަލު
Esperanto: Perioda tabelo
Fiji Hindi: Periodic table
Gàidhlig: Clàr pillteach
Gĩkũyũ: Metha Njokereri
ગુજરાતી: આવર્ત કોષ્ટક
客家語/Hak-kâ-ngî: Ngièn-su chû-khì-péu
한국어: 주기율표
বিষ্ণুপ্রিয়া মণিপুরী: পর্যায় সারণী
Bahasa Indonesia: Tabel periodik
íslenska: Lotukerfið
Kiswahili: Mfumo radidia
lumbaart: Taula periodica
Bahasa Melayu: Jadual berkala
Minangkabau: Tabel periodik
Mìng-dĕ̤ng-ngṳ̄: Nguòng-só ciŭ-gĭ-biēu
Nederlands: Periodiek systeem
नेपाल भाषा: तत्त्वमां
日本語: 周期表
norsk nynorsk: Periodesystemet
oʻzbekcha/ўзбекча: Kimyoviy elementlar davriy sistemasi
Papiamentu: Mesa periodiko
Piemontèis: Tàula periòdica
Plattdüütsch: Periodensystem
português: Tabela periódica
Simple English: Periodic table
Sranantongo: Periodiki sistemi
српски / srpski: Периодни систем
srpskohrvatski / српскохрватски: Periodni sistem elemenata
Taqbaylit: Ayiren imezzi
tarandíne: Tavele Periodiche
Türkçe: Periyodik tablo
Tiếng Việt: Bảng tuần hoàn
West-Vlams: Periodiek système